Categories
All Latest Articles in Urdu

Samarqund mein bemisal hindustani sifaratkari

 68 total views,  1 views today

ندائے حق
سمرقند میں بے مثال ہندوستانی سفارت کاری

اسد مرزا

”پچھلے پندرہ دن کے دوران، ہندوستانی خارجہ پالیسی نے دو مختلف محاذوں پر اپنی کامیابی درج کرائی ہے۔ پہلے تو اس نے امریکہ کی زیر قیادت آئی پی ای ایف کے تجارت سے متعلق ایک اہم ستون میں شامل ہونے سے انکار کردیا اور دوسری جانب گزشتہ ہفتے سمرقند، ازبکستان میں پی ایم مودی نے روس- یوکرین جنگ پر ہندوستانی موقف اور علاقائی ممالک کے درمیان تعاون کو فروغ دینے میں کافی اہم پیش رفت کی۔“

آٹھ ملکی شنگھائی تعاون تنظیم (SCO) کا 22 واں سربراہی اجلاس گزشتہ ہفتے ازبکستان کے دارالحکومت سمرقند میں منعقد ہوا۔ یہ سربراہی اجلاس یوکرین پر روسی حملے اور آبنائے تائیوان میں چین کی جارحانہ فوجی مشقوں کے پس منظر میں عالمی سطح پر مختلف رواں سیاسی بحران کے درمیان منعقد ہوا۔
چین، جس نے 1996 میں اس علاقائی گروپ کو ”شنگھائی فائیو“ کے طور پر شروع کیا تھا، اس فورم کو 8 ممالک کے ایک بااثر علاقائی گروپ میں تبدیل کر دیا ہے، جس میں ایران کے علاوہ دیگر اور ممالک مستقل رکن کے طور پر شامل ہونے کے لیے تیار ہیں اور متنوع ممالک جیسے سعودی عرب، مصر، ترکی، بیلاروس اور منگولیا اس میں مبصر کا درجہ کا ممالک درجہ رکھتے ہیں۔ مجموعی طور پر SCO دوسرے مغربی علاقائی اتحادوں کو چیلنج کرنے کے علاوہ ایک بااثر علاقائی فورم میں تبدیل ہوتا نظر آرہا ہے۔
سربراہی اجلاس میں اپنے خطاب میں، پی ایم مودی نے موجودہ عالمی جیو پولیٹیکل صورتحال کے ہر متعلقہ پہلو کو شامل کیا۔ انہوں نے SCO پر زور دیا کہ وہ خطے میں قابل اعتماد، لچکدار اور متنوع سپلائی چین قائم کرنے کی کوشش کرے۔ اس کے لیے مختلف ممالک کو ایک دوسرے کو ٹرانزٹ کے مکمل اختیارات دینے کے ضرورت ہے، یہ بات انھوں نے بغیر پاکستان کے حوالے سے کہی۔ انہوں نے ہندوستان کو علاقائی مینوفیکچرنگ ہب بنانے کے لیے بھی ہندوستانی کاوشوں کا ذکر کیا۔ غذائی تحفظ کے چیلنجوں سے نمٹنے کے بارے میں، انہوں نے جواراور باجرہ کو ایک متبادل اور سستے آپشن کے طور پر مقبول بنانے کی ہندوستان کی کوششوں کا بھی ذکر کیا۔
اپنی تقریر میں جو مجموعی طور پر پاکستان کے ساتھ دہشت گردی اور چین کے ساتھ علاقائی خودمختاری پر ہندوستان کے علاقائی مسائل کے حوالوں کے بغیر خالی تھی، مسٹر مودی نے یوریشین خطے میں زیادہ تعاون پر زور دیا۔ انہوں نے مینوفیکچرنگ سے متعلق اقدامات پر بھی توجہ مرکوز کی کہ ہندوستان اگلے سال جب SCO کی سربراہی سنبھالے گا اور 2023 کے وسط میں سربراہی اجلاس کی میزبانی کرے گا تو ہندوستان اس سمت میں ایک نیا منصوبہ پیش کرنے کے لیے تیار ہے۔
مودی-شی جن پنگ ملاقات
ہندوستان کے نقطہ نظر سے سب سے اہم ملاقات وزیر اعظم مودی اور چینی صدر جن پنگ کے درمیان ممکنہ ملاقات تھی۔ ہر کوئی حیران تھا کہ کیا مئی 2020 میں ہندوستان کے لداخ کے علاقے میں چینی جارحیت کے معاملات پر دونوں ممالک کے درمیان کمانڈر سطح کی بات چیت کی حالیہ کامیابی کے بعد راستے کی رکاوٹیں اور باہمی تناؤ میں کمی کے بنیاد پر کیا ملاقات ہوسکتی ہے۔
لیکن، سرکاری طور پر MEA نے ایسی کسی ملاقات کا ذکر نہیں کیا۔ درحقیقت، سمرقند نے دو رہنماؤں کے لیے تعلقات کو بحال کرنے کا بہترین موقع فراہم کیا تھا۔ لیکن اپنا موقع تبدیل کرنے کے لیے دونوں فریقین کی طرف سے بہت کم آمادگی دکھائی دی۔ درحقیقت، اگر رپورٹوں پر یقین کیا جائے تو دونوں رہنماؤں کے درمیان ہونے والے تبادلے نے 2014 کے سارک سربراہی اجلاس میں پاکستان کے سابق وزیر اعظم نواز شریف کے ساتھ مسٹر مودی کی طرف سے کیے گئے سرد سلوک کی یاد دلا دی، حالانکہ وہ ملاقات بالآخر دونوں کے درمیان مصافحہ کے ساتھ ختم ہوئی تھی۔لیکن آخری وقت میں سمرقند میں ایسا کچھ نہیں ہوا۔ لیکن یہاں اہم سوال یہ ہے کہ کیا چین بھارت کے ساتھ تعلقات کو بہتر کرنے کے موڈ میں ہے یا نہیں؟بظاہر ایسا لگتا ہے کہ نہیں۔ مودی اور شی جن پنگ اس سے پہلے دو بار ملاقات کر چکے ہیں لیکن یہ ایک دوسرے کے خیالات کو پڑھنے اور ایک قائل اور اصولی موقف اختیار کرنے کے علاوہ نئی پیش رفت حاصل کرنے کے لیے کافی نہیں ہے، حالانکہ اگر تعلقات بہتر ہوتے ہیں تو دونوں ممالک اقتصادی طور پر بہت زیادہ باہمی فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔
مودی -پوتن ملاقات
چوٹی کانفرنس میں روس کے صدر پوتن کے ساتھ پی ایم مودی کی دو طرفہ ملاقات نے بھی کافی توجہ حاصل کی۔ اس ملاقات میں پی ایم مودی نے خاص طور پر اس بات پر زور دیا کہ ”جدید دور جنگ کا وقت نہیں ہے۔“ اطلاعات کے مطابق پوتن نے یوکرائنی تنازعے پر ہندوستان کے موقف کو تسلیم کیا اور اس کے فوری حل کے اپنے عزم کا اعادہ کیا۔
امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن نے اس ملاقات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ یوکرین میں جنگ کے بارے میں روسی رہنما کے ساتھ براہ راست اپنے تحفظات کا اظہار ہندوستانی رہنما کی جانب سے روس کی جارحیت کے اثرات کے بارے میں عالمی خدشات کی عکاسی کرتا ہے۔مرکزی دھارے کے امریکی میڈیا نے بھی جمعہ کو وزیر اعظم نریندر مودی کی تعریف کی کہ انہوں نے روسی صدر ولادیمیر پوتن کو بتایا کہ یہ یوکرین میں ”جنگ کا وقت نہیں ہے”۔ یہ واشنگٹن پوسٹ اور نیو یارک ٹائمز دونوں کے ویب صفحات پر مرکزی کہانی تھی، اور مرکزی دھارے کے امریکی میڈیا کے ذریعہ بڑے پیمانے پر چلائی گئی۔

مودی -اردگان ملاقات
ایک اور غیر متوقع ملاقات پی ایم مودی اور ترکی کے صدر رجب طیب اردگان کے درمیان ہوئی۔ جو کہ غیر اعلانیہ طور پر ہوئی تھی۔ ملاقات کے بعد مودی نے اس بات پر زور دیا کہ دونوں ممالک کے درمیان اقتصادی تعلقات کو اور زیادہ فروغ دینے پر توجہ مرکوز کی گئی ہے۔MEA نے ایک بیان میں اس میٹنگ کو موجودہ ہندوستان-ترکی تعلقات کا جائزہ قرار دیا۔ اقتصادی تعلقات بالخصوص دوطرفہ تجارت میں حالیہ برسوں میں اضافے کو نوٹ کرتے ہوئے، اس نے اقتصادی اور تجارتی شراکت داری کو مزید بڑھانے کے امکانات کو تسلیم کیا۔ اردگان نے آخری بار 2017 میں ہندوستان کا دورہ کیا تھا۔ جب کہ ہندوستان-ترکی کا اقتصادی اور تجارتی تعاون باہمی تعلقات کی ایک اہم جہت ہے، جموں و کشمیر میں آرٹیکل 370 کی منسوخی اور فروری 2020 میں شمال مشرقی دہلی میں ہونے والے فسادات پر ترکیے کی عوامی تنقید سے سفارتی تعلقات بری طرح متاثر ہوئے تھے، جو کہ لگتا ہے کہ اس ملاقات کے بعد اور بدلتے ہوئے عالمی منظر نامے کی بنیاد پر کچھ بہتر ہوسکیں۔
مودی-رئیسی ملاقات
سمرقند میں ایک اور اہم ملاقات پی ایم مودی اور ایرانی صدر ابراہیم رئیسی کے درمیان ہوئی۔ دونوں رہنماؤں نے توانائی، تجارت اور رابطے جیسے شعبوں میں تعلقات کو فروغ دینے پر تبادلہ خیال کیا۔ انہوں نے چابہار بندرگاہ پر شہید بہشتی ٹرمینل کی تعمیر کی پیشرفت کا بھی جائزہ لیا اور ایسے اشارے ملے ہیں کہ ایرانی صدر نے ہندوستان کو امریکی ڈالر کی بجائے روپے کی ادائیگی کی بنیاد پر خام تیل کی فراہمی کے نئے طریقہ کار پر بھی بات کی۔ اس سے دونوں ممالک تجارتی اور اقتصادی محاذوں پر قریب آسکتے ہیں۔
مجموعی طور پر یہ کہا جاسکتا ہے کہ مسٹر مودی اور ان کی سفارتی ٹیم نے سمرقند میں جس طرح سے طریقے سے ہندوستان کا موقف ظاہر کیا وہ پی ایم مودی کی قیادت میں ہندوستانی سفارت کاری کی پختگی اورعلاقائی رہنما کے طور پر اس کے رول اور عزم کو ظاہر کرتا ہے۔ ہندوستان 2023 میں اگلی SCO چوٹی کانفرنس کی میزبانی کرے گا، اور یہ مسٹر مودی کو تنظیم کو ایک زیادہ بامعنی اور مربوط تنظیم میں تبدیل کرنے کا موقع فراہم کرے گا۔ درحقیقت اس علاقائی تنظیم کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ کس طرح متنوع ممالک اس کے رکن بننے کے خواہشمندنظر آتے ہیں اور روسی اور چینی رہنما دونوں اس کو اور ز یادہ کارگر تنظیم بنانے کے لیے آمادہ نظر آتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.